پاکستانی خبریںعالمی خبریں

پاکستان تاریخ کے بدترین سیلاب سے دوچار: ملک کا ایک تہائی حصہ سیلاب سے متائثر ہے، اقوام متحدہ

خلیج اردو
نیویارک: یورپی خلائی ایجنسی ای ایس اے کی سیٹلائٹ تصاویر کے مطابق، پاکستان کا ایک تہائی سے زیادہ حصہ تاریخ کے بدترین سیلاب کی زد میں ہے اور زیر آب ہے۔

سیلاب بے شک ایک بہت بڑا مسئلہ ہے لیکن مہلک سیلابی پانی مزید مسائل پیدا کرتا ہے اور ثانوی آفات کا باعث بنتا ہے۔ سی این این کی رپورٹ کے مطابق پانی نے لاکھوں ایکڑ پر فصلوں کو ڈھانپنے اور لاکھوں مویشیوں کا صفایا کرنے کے بعد خوراک کی کمی ہے۔

30 اگست کو ای ایس اے کی تصاویر کے مطابق مون سون کی طوفانی بارشیں معمول سے 10 گنا زیادہ ہیں۔ ان پانیوں نے دریائے سندھ کو بہا دیا ہے۔جس سے مؤثر طریقے سے ایک لمبی جھیل بن گئی ہے۔

غیر معمولی سیلاب سے پاکستان کو دوہری خوراک اور صحت کے بحرانوں کا سامنا ہے۔

متعلقہ مضامین / خبریں

سی این این نے اپنی رپورٹ میں فلاحی تنظیم ایکشن اگینسٹ ہنگر کا حوالہ دے کر بتایا ہے کہ سیلاب سے قبل ملک میں 27 ملین افراد کو مناسب خوراک تک رسائی نہیں تھی اور اب بڑے پیمانے پر بھوک کا خطرہ اور بھی زیادہ قریب ہے۔

برطانیہ میں قائم امدادی اتحاد اور آفات کی ہنگامی کمیٹی کے چیف ایگزیکٹو صالح سعید نے کہا کہ اس وقت ہماری ترجیح زندگیوں کو بچانے میں مدد کرنا ہے ۔

پاکستان کے وزیراعظم شہباز شریف نے 30 اگست کو کہا کہ لوگوں کو خوراک کی قلت کا سامنا ہے اور ٹماٹر اور پیاز جیسی بنیادی اشیاء کی قیمتیں آسمان کو چھو رہی ہیں۔مجھے اپنے لوگوں کو کھانا کھلانا ہے۔ ان کے پیٹ خالی نہیں ہو سکتے۔

ڈبلیو ایچ او نے ریکارڈ پر پاکستان کے بدترین سیلاب کو اعلیٰ ترین سطح کی ہنگامی حالت کے طور پر بھی درجہ بندی کی ہے جس میں طبی امداد تک رسائی کی کمی کی وجہ سے بیماری کے تیزی سے پھیلنے کی وارننگ دی گئی ہے۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے سربراہ ٹیڈروس اذانوم گیبریئسس نے سیلاب کے نتیجے میں اسہال کی بیماریوں، جلد کے انفیکشن، سانس کی نالی کے انفیکشن، ملیریا اور ڈینگی کے پھیلنے سے خبردار کیا ہے۔

امدادی ایجنسیوں نے متعدی بیماریوں میں اضافے کے بارے میں خبردار کیا ہے، جس سے لاکھوں افراد بیماری کا شکار ہو سکتے ہیں۔ اقوام متحدہ نے اسے پر مونسون ان سٹیرائڈز کہا ہے۔

پاکستان کی نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی کے مطابق جون کے وسط سے اب تک سیلاب سے 1,100 سے زائد افراد جاں بحق ہو چکے ہیں جن میں سے تقریباً 400 بچے ہیں اور لاکھوں افراد بے گھر ہو چکے ہیں۔

پاکستان جو پہلے ہی سیاسی اور معاشی بحران سے دوچار تھا۔ انسان کی طرف سے پیدا ہونے والے موسمیاتی بحران کی صف اول میں ڈال دیا گیا ہے۔

پاکستان میں مون سون کا موسم عام طور پر موسلادھار بارشیں لاتا ہے، لیکن پاکستان کے محکمہ موسمیات کے مطابق1961 میں ریکارڈ شروع ہونے کے بعد سے یہ سال سب سے زیادہ بارشیں ساتھ لایا ہے۔

جنوبی سندھ اور بلوچستان کے صوبوں میں، 30 اگست تک اوسط سے 500 فیصد زیادہ بارش ہوئی ہے جس نے پورے دیہات اور کھیتی باڑی کو اپنی لپیٹ میں لے لیا۔

یورپی یونین کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ پاکستان دنیا کی کرہ ارض کو گرم کرنے والی گیسوں میں سے 1 فیصد سے بھی کم کے لیے ذمہ دار ہے۔ گلوبل کلائمیٹ رسک انڈیکس کے مطابق یہ آب و ہوا کے بحران کے لیے آٹھویں سب سے زیادہ کمزور ملک ہے۔

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرس نے خبردار کیا ہے کہ دنیا ماحولیاتی تباہی کی طرف چل رہی ہے اور جنوبی ایشیا دنیا کے عالمی موسمیاتی بحران کے ہاٹ سپاٹ میں سے ایک ہے۔ ان ہاٹ سپاٹ میں رہنے والے لوگوں کے موسمیاتی اثرات سے مرنے کے امکانات 15 گنا زیادہ ہوتے ہیں۔

پاکستان قطبی خطوں سے باہر کسی بھی جگہ سے زیادہ گلیشیئرز کا گھر بھی ہے لیکن جیسے جیسے آب و ہوا گرم ہوتی جا رہی ہے، یہ گلیشیئر کے پگھلنے والے پانی کے اچانک پھوٹ پڑنے کا زیادہ خطرہ بنتا جا رہا ہے۔

پاکستان کے وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ اس بدترین سیلاب نے انفراسٹرکچر، گھروں اور کھیتوں کو 10 بلین امریکی ڈالر سے زیادہ کا نقصان پہنچایا ہے۔

پاکستان کی وزیر موسمیاتی تبدیلی شیری رحمان کے مطابق 33 ملین سے زیادہ لوگ سیلاب سے متاثر ہوئے ہیں۔ این ڈی ایم اے کے مطابق 10 لاکھ سے زیادہ گھر تباہ جبکہ کم از کم 5000 کلومیٹر سڑکوں کو نقصان پہنچا ہے۔

اقوام متحدہ کے دفتر برائے رابطہ برائے انسانی امور کی صورتحال کی رپورٹ کے مطابق سیلاب نے 20 لاکھ ایکڑ فصلوں کو متاثر کیا ہے اور پاکستان بھر میں 794,000 سے زائد مویشیوں کو ہلاک کیا ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے مطابق بہت سے متاثرہ اضلاع میں رپورٹ کیا گیا ہے کہ لاکھوں لوگ صحت کی دیکھ بھال اور طبی علاج تک رسائی سے محروم ہیں۔

Source Khaleej Times

متعلقہ مضامین / خبریں

Back to top button