Uncategorized

کام کے دوران گرکر معذور ہونے والا مزدور اپنے حق کے حصول کیلئے عدالت پہنچ گیا، کمپنی پر 50 ہزار درہم کا ہرجانہ کیس کر دیا

خلیج اردو
30 نومبر 2020
ابوظبہی: متحدہ عرب امارات میں ایک مزدور جو کہ کار پینٹنگ کاکام کرتا تھا، نے ورک سائیٹ سے گرنے کی وجہ سے معزوری کے بعد بطور ہرجانہ 500 ہزار درہم کا مطالبہ کیا ہے۔ اس حادثے میں مزدور کے جسم کا 40 فیصد سے زائد معزوری ہوئی تھی۔

23 سالہ ایشیائی باشندے نے اپنے آجر جو کہ ایک ایک پینٹ کمپنی ہے اور اس کی انشورنس کمپنی کے خلاف قانونی چارہ جوئی کا مطالبہ کیا ہے ۔ جس سے وہ زوال کے نتیجے میں جسمانی ، اخلاقی اور مادی نقصانات میں معاوضے کا مطالبہ کرتا ہے۔

قانونی چارہ جوئی میں مزدور نے کہا کہ پولیس کو واقعے کے بارے میں مطلع نہیں کیا گیا تھا۔ اور کمپنی کے بجائے ایک اور ملازم نے اسے اسپتال پہنچایا جس سے کمپنی کی غفلت ظاہرہوتی ہے۔

کارکن کے مطابق اس کے مالکان نے افسو کرنے کے بجائے الٹا مجھے مورد الزام ٹہرایا اور بتایا کہ اونچائی سے گرنا میری لاپرواہی کا نتیجہ ہے۔ جبکہحقیقت یہ ہے کہ کمپنی نے کام کرنے والی سائٹ پر مجھے مطلوبہ حفاظتی اقدامات فراہم نہیں کیے تھے۔

اس شخص نے یہ بھی دعوی کیا کہ کمپنی نے واقعے کو حکام سے چھپائےرکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کمپنی کے محکمہ ایچ آر نے مبینہ طور پر دھمکی دی ہے کہ اگر وہ کسی کو بھی حادثے کے بارے میں معلومات فراہم کرے گا تو اس کی خدمت ختم کردے گی۔

اس نے ابو ظہبی سول عدالت میں ایک میڈیکل رپورٹ پیش کی جس میں اس بات کی تصدیق کی گئی کہ اس کی ہڈی ٹوٹ جانے کی وجہ سے اس کی 40 فیصد مستقل معذوری واقع ہوئی ہے۔

کارکن نے کہا کہ وہ معذوری کی وجہ سے عام طور پر اپنے فرائض سرانجام دینے سے قاصر ہے اور یہ کہ وہ گھر کا اکلوتا کفیل ہے اور کوئی دوسرے کمانے والا نہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اب وہ مستقل دوائیوں کا استعمال کررہا ہے اور علاج کے لئے مالی مدد کی ضرورت ہے۔

Source: Khaleej Times

متعلقہ مضامین / خبریں

Back to top button