خلیجی خبریںمتحدہ عرب امارات

دبئی نے 300 درہم سے زائد بین الاقوامی اشیا پر نئی کسٹم ڈیوٹی معطل کردی

خلیج اردو: دبئی نے 300 درہم سے زیادہ کی بین الاقوامی سطح پر خریدی گئی اشیا پر نئی کسٹم ڈیوٹی معطل کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

دبئی کسٹمز کی طرف سے بھیجی گئی ایک ای میل میں، اعلان کیا گیا ہے کہ پارسلز اور ڈیلیوری کی استثنیٰ کے لیے 1,000 درہم کی پچھلی حد کو یکم مارچ سے بحال کر دیا گیا ہے۔

پیغام میں لکھا گیا ہے کہ "برائے مہربانی مطلع کیا جائے کہ کسٹمز نوٹس 5/2022 کے آرٹیکل (2) کا پیراگراف (a) جس کی مالیت 300/- درہم سے زیادہ نہ ہو، کی کنسائنمنٹس کی استثنیٰ سے متعلق معطل کر دی گئی ہے۔، اور یہ کہ اگلے نوٹس تک، جو 01-مارچ-2023 سے لاگو ہے، اس میں 1,000درہم /- کے پارسل کی چھوٹ کے لیے پچھلی حد کو دوبارہ قائم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

یہ اس سال جنوری کی بات ہے جب دبئی نے 300 درہم سے زیادہ کی بین الاقوامی سطح پر خریدی گئی اشیا پر نئی کسٹم ڈیوٹی متعارف کرائی تھی۔ قبل ازیں یہ ڈیوٹی صرف 1,000 درہم کی قیمت یا اس سے زائد مالیت والے سامان پر لاگو ہوتی تھی

متعلقہ مضامین / خبریں

ڈیوٹی کی شرح سامان کے پانچ فیصد پر رکھی گئی تھی، جس کا مطلب یہ تھا کہ بین الاقوامی سطح پر خریداری کرنے والے باشندوں کو پانچ فیصد درآمدی کسٹم ڈیوٹی اور پانچ فیصد ویلیو ایڈڈ ٹیکس (VAT) ادا کرنا ہوگا۔

تمباکو، تمباکو کی مصنوعات، ای سگریٹ اور واپنگ مائع پر 200 فیصد کی شرح سے زیادہ ڈیوٹی لاگو تھی، اس کے علاوہ "گناہ ٹیکس” ہے جو شکر والے مشروبات پر بھی لاگو ہوتا ہے۔

2017 میں، متحدہ عرب امارات نے ایسی مصنوعات پر ایکسائز ٹیکس متعارف کرایا جو انسانی صحت کے لیے نقصان دہ ہیں جیسے کاربونیٹیڈ ڈرنکس، انرجی ڈرنکس، تمباکو اور تمباکو کی مصنوعات۔ بعد میں، ایکسائز ٹیکس کا دائرہ ای سگریٹ نوشی کے آلات اور اس میں استعمال ہونے والے مائعات اور میٹھے مشروبات تک بڑھا دیا گیا۔

متعلقہ مضامین / خبریں

Back to top button