خلیجی خبریںمتحدہ عرب امارات

دبئی کی عدالت نے ایک کمپنی کے دو شراکت داروں کو23 ملین درہم ہرجانے کا حکم دیا

خلیج اردو: دبئی میں ایک شخص کو اس کے کاروباری پارٹنر کے مبینہ طور پر کمپنی میں اس کے حقوق سے انکار کے بعد قانونی تنازعہ نے جنم لے لیا ہے کیونکہ اس شخص نے دبئی میں ایک دوا ساز کمپنی کے قیام کیلئے 15.4 ملین درہم معاوضہ بطور منافع کی وصول کرنیکی شرط پر 60,000 کی سرمایہ کاری کی تھی ۔ عدالت نے ایک تیسرے پارٹنر کو بھی 7.7 ملین درہم معاوضے کی ادائیگی کا حکم دیا جو اسی کیس میں "غبن” کا شکار تھا۔

دبئی کیسیشن کورٹ نے سنا کہ متاثرین میں سے ایک نے 2009 میں کمپنی کے قیام کے وقت اپنا حصہ ادا کیا تھا، لیکن اس نے اپنا نام بطور پارٹنر رجسٹر نہیں کروایا کیونکہ وہ اس وقت ایک سرکاری ملازم کے طور پر کام کر رہا تھا۔

جیسے جیسے پارٹنرشپ فرم نے ترقی اور توسیع کی، اس شخص نے اپنی ملازمت چھوڑنے اور تیسرے پارٹنر کے ساتھ باضابطہ طور پر کمپنی میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا۔ تاہم، اس وقت، پہلے پارٹنر نے دوسرے دو شراکت داروں کے حقوق سے انکار کیا۔ اس کے بعد دونوں متاثرہ شراکت داروں نے اپنا حق مانگنے کے لیے مقدمہ دائر کیا۔

ریکارڈ سے پتہ چلا کہ پہلے پارٹنر نے مبینہ طور پر اپنی بیوی کے نام سے کمپنی رجسٹر کی اور متاثرین کو ان کے حقوق دینے سے انکار کیا تاہم عدالت نے معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے فیصلہ جاری کرتے ہوئے مدعا علیہ کو حکم دیا کہ وہ پہلے متاثرہ شخص کو 15.4 ملین درہم اور دوسرے متاثرہ شخص کو7.7 ملین درہم ادا کرے۔ اس معاوضے میں، جس میں کمپنی کے منافع کا حصہ شامل تھا۔ یہ فیصلہ اس وقت آیا جب یہ ثابت ہو گیا کہ پہلے متاثرہ شخص نے کمپنی کے سرمائے کا 50 فیصد حصہ ڈالا تھا۔
قانونی مشیر محمد نجیب کے مطابق، پہلے متاثرہ شخص نے عدالت میں ثابت کیا تھا کہ اس نے 2009 میں دوا ساز کمپنی کے قیام کے لیے 60,000 درہم اپنے پارٹنر کو منتقل کیے تھے اور ساتھی اسے کمپنی کے اخراجات اور منافع کے بارے میں رپورٹس بھیجتا تھا، جب کاروبار پھلنے پھولنے لگا تو مدعا علیہ نے متاثرہ کو کمپنی سے ہٹانے کا فیصلہ کیا۔

متعلقہ مضامین / خبریں

محمد نجیب نے بتایا کہ سال "2010 میں، انہوں نے نام تبدیل کرنے اور توسیع کرنے کا فیصلہ کیا۔ [پہلا] پارٹنر ای میل کے ذریعے میرے کلائنٹ کو کمپنی کی مالی رپورٹ فراہم کرتا تھا۔ وہ 2020 تک [ایک ساتھ] کام کرتے رہے،‘‘ نجیب ۔

"پہلے پارٹنر نے شروع سے ہی اپنی بیوی کے نام سے کمپنی رجسٹر کر رکھی تھی اور میرے مؤکل اور تیسرے پارٹنر کو ملکیت کے حقوق سے انکار کرنے کے لیے اقدامات کیے تھے۔ نجیب نے مزید کہا کہ اس نے [مدعا علیہ] نے اپنی بیوی کے ساتھ ساتھ، دو دیگر شراکت داروں کے علم میں لائے بغیر خود کو کمپنی میں شراکت دار بنایا تھا۔

جیسے جیسے کمپنی کی ترقی ہوئی، پہلے پارٹنر نے پھر کمپنی کی ملکیت اپنے نام کر دی۔ "اس نے کمپنی کے فنڈز اور 30,000درہم سے زیادہ کا منافع اپنی بیوی کے اکاؤنٹ میں منتقل کیا تاکہ دو دیگر شراکت داروں کے حقوق سے انکار کیا جا سکے۔

رپورٹس اور ای میلز
"میرے مؤکل نے عدالت کے سامنے 60,000 درہم کی بینک ٹرانسفر اور کئی سالوں سے مدعا علیہ کے ساتھ کی گئی رپورٹس اور ای میلز دکھا کر اپنے شراکت داری کے دعووں کو ثابت کیا۔”

دبئی کی عدالت نے مدعا علیہ کو حکم دیا کہ وہ پہلے متاثرہ شخص کو 15.4 ملین اور دوسرے متاثرہ شخص کو 7.7 ملین درہم ادا کرے۔

پہلے پارٹنر کی فیصلے کے خلاف اپیل

عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا کہ "کمپنی کے قیام کی بنیادی شرط کمپنی کے قیام میں حصہ لینے اور سرمائے میں شراکت کے ساتھ ساتھ منافع اور نقصان میں حصہ لینے کا ارادہ ثابت کرنا ہے-

متعلقہ مضامین / خبریں

Back to top button